محبوبِ رب العالمینؐ

Print Friendly, PDF & Email

ہم جو سمجھے ہیں یقینا وہ نہیں کچھ اور ہے
رتبۂ محبوبِ رب العالمیں کچھ اور ہے
دل کو کیا بھائے گدایانِ حرم کی گفتگو
جانتا ہوں میں کہ درسِ شاہِ دیں کچھ اور ہے
مٹ گئیں ساری تفکر کی لکیریں دفعتاً
ایک سجدہ کیا کِیا رنگِ جبیں کچھ اور ہے
میری آنکھوں کی طلب ہے دید کعبہ کی مگر
میرے دل کی آرزو اے ہم نشیں کچھ اور ہے
سہوِ آدمؑ کی کہانی سب سناتے ہیں مگر
درحقیقت قصۂ خلدِ بریں کچھ اور ہے
چل رہے ہیں جس پہ ہم یہ راستہ اُن کا نہیں
سُنت و پیغامِ ختم المرسلیںؐ کچھ اور ہے
ہے مقدس آسمانی ہر صحیفہ ہر کتاب
لیکن ان میں شانِ قرآنِ مبیں کچھ اور ہے
بارشِ انوار ہوتی ہے وہاں پر رات دن
گنبدِ خضریٰ جہاں ہے وہ زمیں کچھ اور ہے

انوار عزمی

Share this: