نذرِ شورش

Print Friendly, PDF & Email

خلیل احمد خلیل
وہ ایک مردِ قلندر خودی کا دیوانہ
خرد پرستوں میں وہ ایک تاجدارِ جنوں
وہ اپنی ذات میں فرزندِ ملتِ اسلام
خطیبِ عشق کہوں یا نقیبِ شوق کہوں
معاشرے کے لیے اور عبادتوں کے لیے
جو عادتیں تھیں سبھی عشقِ مصطفیؐ سے لیں
اساسِ ملک اور اسلامی نظریے کے لیے
صعوبتیں بھی بہت قید و بند کی جھیلیں
بلند شعلہ بیانی سے توڑ ڈالا سکوت
قلم سے ڈالا ہے دیوارِ اہرمن میں شگاف
سیاسی جبر و حراست کے سامنے آکر
چٹان بن کے کھڑا تھا وہ آمروں کے خلاف
میں کیا بتائوں کہ کیا کیا صفات تھیں اس میں
ادب پرست قلم کا دھنی مدبر تھا
شعور مجلسِ احرار کا حریت مند
وہ اپنے وقت کا شعلہ بیاں مقرر تھا
قلم جب اس کا ہوا اس وطن میں سینہ سپر
پھر اشتراکی عزائم بھی ہو گئے مسدود
بلند ختمِ نبوت کا اس سے پرچم تھا
اسی کے دم سے ہے آباد شورش موجود
سدا حریف تھا خود ساختہ خدائوں کا
بلیغ و جامع و حق گوئی تھا علم اس کا
تمام عمر تھا باطل سے برسرِپیکار
کہ حق پرست تھا بے ساختہ قلم اس کا
سدا عدم میں بھی آباد ہو کہ شورشؔ نے
لہو دیا ہے صحافت کا رنگ بھرنے میں
کوئی کسر نہ اٹھا رکھی اپنی جانب سے
سیاسی قبلہ کو اس نے درست کرنے میں

Share this: