انسانوں سے محبت کرو

Print Friendly, PDF & Email

عبادت اس مقام پر نہیں پہنچا سکتی جہاں غریب کی خدمت پہنچاتی ہے۔ اللہ تعالیٰ نے زکوٰۃ کا حکم فرمایا، غریب کے لیے۔ اللہ کے پاس زمین و آسمان کے خزانے ہیں۔ وہ مالک ہے، وہ خود عطا کرسکتا ہے، پھر زکوٰۃ کی کیا ضرورت ہے؟ اللہ تعالیٰ نے انسان کو حکم دیا کہ اپنے جمع شدہ مال میں سے غریب بھائی کی خدمت کرے، اور وہ پیسہ جو سنگدلی پیدا کررہا ہے وہ فراخدلی پیدا کرے۔ نظامِ خیرات، صدقات اور بیت المال سب غریبوں کے لیے ہے تاکہ جو لوگ زندگی کی دوڑ میں پیچھے رہ گئے ہوں ان کا ہاتھ پکڑ کر ان کو بھی ساتھ چلا دیا جائے، ورنہ اس چند روزہ زندگی میں سفر تو سب کا کٹ ہی جائے گا اور پھر اس کے بعد ایک ایسا دور آئے گا، ایک ایسا دن ہوگا جب انسان سے پوچھا جائے گا کہ اس نے اللہ کی دی ہوئی نعمتیں کس طرح استعمال کیں۔ اس نے انسانوں کے ساتھ کیسا سلوک کیا۔
ہماری نیکیاں انسان کے ساتھ، ہماری بدی انسان کے ساتھ، یعنی نظامِ ثواب و گناہ انسانوں ہی کے ذریعے سے مرتب ہوتا ہے۔ اگر ہمارے سوا دنیا میں اور کوئی انسان نہ ہو تو ہمارے لیے نہ کوئی جزا ہے نہ سزا۔ ہم جمادات و حیوانات میں سے ہوجائیں۔ انسان کے دم سے ہی رونقیں ہیں۔ اللہ کے نام پر انسانوں کے ساتھ سنگتیں بنتی ہیں۔ اللہ کے خوف سے انسانوں کے ساتھ نیکیاں کی جاتی ہیں۔ یہی خوفِ الہٰی ہمیں گناہوں سے بچاتا ہے۔ ہم دوسروں کے حقوق پامال نہیں کرسکتے اس لیے کہ ہم اللہ سے ڈرتے ہیں۔ ہم ایک بتائے ہوئے راستے کے مطابق سفر کرتے ہیں کہ وہ راستہ ہمیں اللہ نے اپنے پیغمبر صلی اللہ علیہ وسلم کے ذریعے بتایا۔ اللہ تعالیٰ کے احکام کی عملی شکل پیغمبر صلی اللہ علیہ وسلم کی حیاتِ طیبہ میں نمایاں ہوتی ہے۔ پیغمبر صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات اس لیے بھی اہم ہے کہ اس ذات میں ثبوت ہے کہ اللہ اپنے بندوں سے پیار کرتا ہے۔ اس ذات کے ذریعے بتایا جاتا ہے کہ زندگی صرف عبادت نہیں ہے۔ زندگی کوشش ہے، زندگی جہاد ہے، زندگی محبت ہے، زندگی فتوحات ہے، زندگی تنہائی بھی ہے، مجلس بھی ہے، زندگی تنہائی کا سجدہ بھی ہے اور محفلوں کی رونقیں بھی۔ اللہ کی محبت انسانوں کے ساتھ جلوہ گر ہوتی ہے۔ یہ ممکن ہی نہیں کہ کوئی شخص مقرب الہٰی ہو اور انسان کی محبت سے محروم ہو۔ یہ دعویٰ شیطانی ہے کہ ہم صرف اللہ سے محبت کرتے ہیں اور مخلوق سے کچھ سروکار نہیں۔ یہ غرور ہے، تکبر ہے۔ شیطان نے انسان کو تسلیم کرنے سے انکار کیا اور نتیجہ یہ کہ خدا کے آگے کیے ہوئے سجدے بھی رائیگاں ہوگئے۔ ہمارا سارا نظامِ عبادت انسانوں سے مرتب ہے، ہماری دعائیں بالعموم اجتماعی ہیں۔ ’’اے ہمارے رب! ہم پر رحم فرما، ہمیں سیدھی راہ دکھا… ہم پر ہماری ہستی سے زیادہ بوجھ نہ ڈال، ہمیں گناہوں سے بچا‘‘۔ گویا کہ منشائے الہٰی یہی ہے کہ ’’میں‘‘ سے ’’ہم‘‘ بنا جائے۔ ’’ہم‘‘ کے بغیر ’’تم‘‘ کی عبادت جھوٹ ہے۔ ایک مقام پر انسان کو تنہا رکھا گیا ہے… سجدہ… اللہ کی عظمت بیان کرتے وقت…
ہمارا سارا منظر اور پس منظر انسانوں سے ہے۔ غور کیا جائے تو کوئی انسان، انسانوں کی وابستگی کے بغیر رہ نہیں سکتا۔ مثلاً میرے پاس صرف آنکھیں ہیں، نظر ہے، لیکن میرا منظر انسانوں کے چہرے سے بنا ہے۔ اگر منظر نہ ہو تو نظر کس کام کی؟ اسی طرح میری سماعت محتاج ہے انسانوں کی آواز کی۔ میرے اردگرد بولنے والے انسانوں کا ہجوم نہ ہو تو میرے کان بیکار ہوجائیں۔ اللہ نے انسانوں کو بیان عطا فرمایا۔ یہ بڑے غور کا مقام ہے کہ بیان سننے والا نہ ہو تو بیان کیا بیان ہو گا۔ میری زبان محتاج ہے سننے والے کانوں کی، میرا دل محتاج ہے انسان کے چہرے کی محبت کا، میرے جذبات، میرے احساسات سب انسانوں سے وابستہ ہیں، مجھے رہنمائی چاہیے کسی انسان کے ذریعے۔ اللہ کی منزلوں تک پہنچانے والا اللہ کا بندہ ہی ہوگا۔ میں نیکی بدی، گناہ و ثواب، خوشی اور غم جو کچھ بھی حاصل کروں گا انسان کے ذریعے۔ میری زندگی، انسانوں کے ذریعے سے گزرے گی۔ ہمیں بات سمجھ میں نہیں آتی ہے۔ میری پیاس بجھانے والا پانی کتنے ہاتھوں کی محبت کا نتیجہ ہے۔ ہمارے پائوں کے نیچے جو سڑک ہے اس کے بننے میں کتنے سال اور کتنے انسانوں کے پسینے لگے ہوئے ہیں۔ آنکھ کھول کے چلے تو انسان کو انسانوں کے احسانات نظر آئیں گے۔ ان انسانوں کا شکریہ ادا کرنا ہے۔ اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے ’’جس نے انسان کا شکریہ ادا نہ کیا اُس نے خدا کا کیا شکریہ ادا کرنا ہے‘‘۔ جس انسان نے ماں باپ کو پرورش کرتے ہوئے دیکھا اور انہیں نہ مانا، اس نے خدا کو دیکھے بغیر کیا ماننا ہے؟
اللہ تعالیٰ انسانوں ہی کی دنیا میں اپنے جلوے دکھاتا ہے۔ انسان خاموشی سے دعا مانگتا ہے، اللہ خاموش دعائوں کو سنتا ہے، منظور فرماتا ہے۔ اللہ کے جلوے انسانوں کے روپ میں ہر ہر جگہ نظر آسکتے ہیں۔ یہ جہان اللہ کی نشانیوں سے بھرا پڑا ہے۔ اللہ کے بندوں نے اللہ کی یاد کے چراغ جلا دیے، اور ان چراغوں کی روشنی میں آنے والے انسانوں کو نئی منزلوں پر چلنے کی توفیق دی۔ اللہ کی تلاش بہت آسان ہے۔ وہ انسانی شہ رگ سے قریب ہے،بہت قریب… لیکن اس تک رسائی حاصل کرنا اس لیے مشکل ہے کہ انسان، انسان ہے اور اللہ، اللہ! حادث، قدیم نہیں ہوسکتا، اور قدیم حادث نہیں ہوسکتا۔ بس فرق یہی ہے کہ ہم ساجد ہیں وہ مسجود۔ ہم پیدا ہوتے ہیں اور مر جاتے ہیں، اور وہ پیدائش اور موت سے آزاد حی و قیوم ہے۔ وہ ہر آغاز سے پہلے موجود تھا اور ہر انجام کے بعد موجود رہے گا۔ وہ اتنا قریب ہے لیکن اسے دیکھا نہیں جا سکتا جس طرح ہم اپنی بینائی کو خود نہیں دیکھ سکے لیکن بینائی ہمارے قریب رہتی ہے۔ ہماری روح ہمارے پاس ہے لیکن ہم اسے دیکھ نہیں سکتے۔ ہماری ذات ہر وقت ہمارے ساتھ ہے لیکن اپنی ذات کا دیدار ممکن نہیں۔ سمندر میں رہنے والی مچھلی سمندر کو دیکھ نہیں سکتی۔ پانی سے نکلے بغیر سمندر نظر نہیں آتا، اور پانی سے نکلے تو مچھلی، مچھلی نہیں رہتی۔ بس اللہ کے جلوے، اللہ کے جلوے ہیں۔ پاس ہیں، ساتھ ہیں لیکن کیا ہیں… اور کہاں ہیں؟ صرف محسوس کیا جا سکتا ہے… اور اللہ کی محبت کی انتہائی عملی شکل اللہ کے محبوب صلی اللہ علیہ وسلم کی اطاعت اور محبت میں ہے۔
[واصفیات، حرف حرف حقیقت…واصف علی واصف]

بیادِ مجلس اقبال

کی محمدؐ سے وفا تُو نے تو ہم تیرے ہیں
یہ جہاں چیز ہے کیا لوح و قلم تیرے ہیں

۔”شکوہ“ علامہ کی مشہور نظم ہے جس میں وہ اللہ کے حضور اپنی ملت کا مقدمہ پیش کرتے ہیں۔ وہ اللہ کریم سے گہری محبت و بندگی کے جذبوں سے سرشار ہوکر ایک لاڈلے غلام کے طور پر کبھی شکوہ شکایت اور کبھی طرح طرح کی اٹکھیلیاں بھی کرتے ہیں اور پھر شکوہ کے جواب میں اللہ تعالیٰ کی جانب سے ملنے والے جواب کو ’’جوابِ شکوہ‘‘ کا نام دیتے ہیں، جس میں اپنے ہر سوال کا جواب پیش کرتے ہیں۔ اور نہایت قابلِ توجہ بات یہ ہے کہ ’’شکوہ و جوابِ شکوہ‘‘ کے نام سے طویل شعری سلسلے کا اختتام اس شعر پر کرتے ہیں، جس سے علامہ کے عشقِ رسولؐ کی کیفیات کا اظہار ہوتا ہے۔ وہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے یہ جواب وصول کرتے ہیں کہ دیکھو اگر تم نے میرے پیارے پیغمبرؐ سے سچی محبت و اطاعت اور وفاداری کا ثبوت دیا تو پھر گویا ہم خود ہی تمہارے ہوجائیں گے اور پھر جو تم چاہوگے وہ تمہیں عطا کیا جائے گا، یعنی ایسے سمجھ لو کہ تم اپنی تقدیر اپنے ہاتھ سے لکھنے کا اختیار حاصل کرلوگے۔ یہ اللہ کی طرف سے اس اجر کا اعلان ہے کہ جو میرے نبیِ برحقؐ کے نقشِ قدم کو اپنائے گا تو گویا اُس نے دنیا جہان کی بھلائیاں حاصل کرلیں۔ یہ ابدی سچائی کا حامل شعر ہے جو قیامت تک آنے والے ہر فرد کو مخاطب بنا کر اسے اللہ کی رضا حاصل کرنے کا راستہ بتا رہا ہے۔ یہ قرآن پاک کے اس اعلان کی حقیقت بتاتا ہے کہ اتباع ِرسولؐ کرنے والاتو اللہ کا محبوب بن جاتا ہے۔

Share this: