ـ17رمضان المبارک غزوۂ بدر …یوم الفرقان حق و باطل کا پہلا معرکہ

Print Friendly, PDF & Email

اسلام اور کفر کے درمیان پہلا معرکہ بدر کے مقام پر2ھ 17 رمضان المبارک کو ہوا، جس میں اللہ تعالیٰ نے اسلام کو شاندار فتح سے نوازا، اورکفر کی کمر توڑ کر رکھ دی۔ اس لیے 17رمضان المبارک کو اللہ تعالیٰ نے ’یوم الفرقان‘ کا نام دیا ہے۔ یہ روئے زمین کی پہلی جنگ تھی جو اسلحہ اور ظاہری مال و اسباب کے بجائے اللہ پرکامل ایمان اور ایقان کی بنیاد پر لڑی گئی۔ بدر مکہ اور مدینہ سے شام جانے والے تجارتی قافلوں کی گزرگاہ پر ایک چھوٹا سا گائوں تھا جس کے اردگرد چھوٹے پہاڑی ٹیلے تھے۔ تجارتی راستہ ہونے کی وجہ سے اس کی ایک خاص اہمیت تھی۔ میدانِ بدر مدینہ منورہ سے قریباً 80 اور مکہ سے 220 میل کے فاصلے پر تھا۔
مسلمانوں کے مکہ سے ہجرت کرکے مدینہ چلے جانے کے بعد اسلام دشمن خصوصاً سردارانِ قریش بہت جزبز ہورہے تھے اور اپنے ہاتھ مَل رہے تھے کہ مسلمان اپنی جانیں بچا کر ان کے ہاتھ سے نکل گئے۔ علاوہ ازیں مکہ کے مشرک اور اسلام دشمن سرداروں کو یہ خوف بھی لاحق تھا کہ مسلمان قوت پکڑ کر اس تجارتی راستے کو بند کردیں گے اور مکہ کی تجارت اور کاروبار ختم ہوجائے گا۔ کفارِ مکہ دن رات اسی سوچ بچار میں تھے کہ کسی طرح مسلمانوں کو ہمیشہ کے لیے کچل دیا جائے۔ وہ غصے اور انتقام کی آگ میں جھلس رہے تھے اور مدینہ پر چڑھ دوڑنے کا بہانہ ڈھونڈ رہے تھے۔ انہی دنوں مکہ کا ایک تجارتی قافلہ ابوسفیان کی قیادت میں شام سے مالِ تجارت لے کر واپس آرہا تھا۔ اس قافلے کی حفاظت کی آڑ میں سردارانِ قریش نے ایک ہزار جنگجوئوںکا بہت بڑا لشکر تیارکیا جو ہر طرح کے اسلحہ سے لیس تھا۔
نبیِ مہربان حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کو مدینہ پر حملے کی غرض سے قریشی لشکر کی آمد کی اطلاع ملی تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجلس مشاورت بلوائی اور خطرے سے نپٹنے کے لیے تجاویز طلب فرمائیں۔ مہاجرین نے جاں نثاری کا یقین دلایا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے دوبارہ مشورہ طلب کیا تو انصار میں سے سعد بن عبادہؓ نے عرض کیا کہ غالباً آپؐ کا روئے سخن ہماری طرف ہے۔ آپؐ نے فرمایا: ہاں۔ حضرت سعد بن عبادہؓ نے عرض کیا کہ ’’یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم! ہم آپؐ پر ایمان لائے ہیں۔ ہم نے آپؐ کی تصدیق کی اور گواہی دی ہے کہ جو کتاب آپؐ لائے ہیں وہ حق ہے، اور ہم نے آپؐ کی اطاعت اور فرماں برداری کا عہد کیا ہے۔ یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم! آپ جس طرف جانے کا حکم دیں گے ہم میں کوئی ایک بھی اس سے پیچھے نہیں ہٹے گا۔ قسم ہے اس ذات کی جس نے حق کے ساتھ آپؐ کو مبعوث کیا اگر آپؐ ہمیں سمندر میںکود جانے کا حکم دیں گے تو ہم سمندر میںکود جائیں گے‘‘۔
حضرت مقداد ؓنے عرض کیا ’’ہم موسیٰؑ کی امت کی طرح نہیں ہیں جس نے موسیٰؑ سے کہا کہ تم اور تمہارا رب جاکر دشمن سے لڑو، ہم تو یہاں بیٹھ کر دیکھیںگے۔ بلکہ ہم آپؐ کے دائیں بائیں اور آگے پیچھے آپؐ کے ساتھ لڑیں گے‘‘۔
غزوۂ بدر میں مسلمانوں کی فتح کا سب سے بڑا اور اصل سبب نصرتِ الٰہی تھی۔ اللہ تبارک وتعالٰی سے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے نہایت گریہ وزاری سے دعا فرمائی ’’اے خدا! یہ قریش ہیں، اپنے سامانِ غرور کے ساتھ آئے ہیں تاکہ تیرے رسول کو جھوٹا ثابت کریں۔ اے اللہ! اب تیری وہ مدد آجائے جس کا تُو نے مجھ سے وعدہ فرمایا۔ اے اللہ! اگر آج یہ مٹھی بھر نہتے لوگ مارے گئے تو پھر روئے زمین پر تیری عبادت کرنے والا کوئی نہیں بچے گا‘‘۔ دعا کے دوران آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی داڑھی مبارک آنسوئوں سے بھیگی ہوئی اور ہچکیاں بندھی ہوئی تھیں۔ آپؐ کے کندھوں پر پڑی ہوئی چادر بار بار نیچے گر جاتی جسے حضرت ابوبکر صدیقؓ اٹھاکر آپؐ کے کندھوں پر ڈال دیتے اور ساتھ ساتھ آپؐ کی ڈھارس بندھاتے کہ اللہ تعالیٰ آپؐ کو تنہا نہیں چھوڑے گا اور آپؐ کی ضرور مدد کرے گا۔
اس کے جواب میں اللہ تعالیٰ نے آپؐ کو فتح کی بشارت دی اور ایک ہزار فرشتوں سے امداد فرمائی، جس کا ذکر اللہ تعالیٰ نے سورۃ الانفال میںکیا ہے۔ جنگ سے ایک روز قبل آپؐ نے میدانِ بدر کا معائنہ فرمایا، آپؐ کے ہاتھ میں چھڑی تھی جس سے آپؐ نے میدان میں مختلف جگہ پر دائرے لگائے اور فرمایا کہ ابوجہل یہاں قتل ہوگا، ولید، عتبہ اور شیبہ یہاں قتل ہوں گے۔ جنگ کے بعد صحابہؓ نے دیکھا کہ ان مشرک سرداروں کی لاشیں اسی جگہ پڑی تھیں جہاں آپؐ نے دائرے لگائے تھے۔
جنگِ بدر میں مسلمانوں کی کُل تعداد محض 313 نفوسِ قدسیہ پر مشتمل تھی، ان میں سترہ سالہ نوجوان عمیر سے لے کر ساٹھ سالہ بوڑھے تک سب لوگ شامل تھے۔ جنگی مال و اسباب اور اسلحہ کی شدید قلت تھی۔ محض 2 گھوڑے اور 70اونٹ تھے۔ لڑنے والوں کے پاس ڈھنگ کی تلواریں بھی نہیں تھیں۔ مگر اللہ کے ان سپاہیوں کو جنگی اسلحہ اور اپنی قوتِ بازو سے زیادہ اللہ کی مدد اور نصرت کا یقین تھا۔
کافر ہے تو شمشیر پہ کرتا ہے بھروسہ
مومن ہے تو بے تیغ بھی لڑتا ہے سپاہی
جنگِ بدر کا عجیب منظر تھا کہ بھائی بھائی کے خلاف، باپ بیٹے، اور بیٹا باپ کے خلاف، بھانجا ماموں اور چچا بھتیجے کے خلاف نبردآزما تھا۔ حضرت ابوعبیدہؓ نے اپنے والد جراح کو، عمر فاروق ؓنے اپنے ماموں عاص بن ہشام کو، مصعبؓ نے اپنے بھائی عبید کو، اور اسی طرح بہت سے صحابہ نے اپنے قریبی رشتے داروں کو اپنے ہاتھوں سے قتل کرکے غیرتِ اسلامی اور محبتِ نبوی کا بے مثال مظاہرہ کیا۔ غزوۂ بدر کے بعد ایک بار حضرت ابوبکر صدیقؓ کے بیٹے نے جو جنگ میں کفار کی طرف سے لڑے تھے، اپنے والد سے کہا کہ جنگِ بدر میں آپ دو بار میری تلوار کے نیچے آئے مگر میں نے آپ پر وار نہیں کیا۔ حضرت ابوبکر صدیقؓ نے کہا کہ بیٹا اگر تُو ایک بار بھی میری تلوار کے نیچے آجاتا بخدا میں اپنا ہاتھ نہ روکتا۔
غزوۂ بدر میں ابوجہل، عتبہ اور شیبہ سمیت کفار کے بڑے بڑے نامور سردار مارے گئے۔کفار کے لشکر کے 70لوگ تہ تیغ ہوئے اور 70کو قیدی بنا لیا گیا۔کفر کے غرور اور تکبر کو اللہ تعالیٰ نے ہمیشہ کے لیے خاک میں ملادیا، اسلامی لشکر کے 14سپاہی شہید ہوئے۔
اللہ تعالیٰ نے مسلمانوں کے ساتھ فتح و نصرت کا جو وعدہ فرمایا تھا وہ پورا ہوگیا۔ ابوجہل اور دیگر قریشی سرداروں نے مکہ سے روانہ ہونے سے پہلے خانہ کعبہ کا غلاف پکڑ کر دعا کی تھی کہ ’’خدایا دونوں گروہوں میں سے جو بہتر ہے اس کو فتح عطا کر، اور جو ظلم کے راستے پر ہو اسے تباہ کر‘‘۔ چنانچہ غزوہ بدر میں اللہ تعالیٰ نے اپنا فیصلہ فرما دیا کہ کون حق پر ہے اور کون باطل پر۔
اسلامی اخوت کا دلوں پر اس قدر غلبہ تھا کہ انصار اور مہاجر ایک دوسرے کو اپنا بھائی اور اپنے غیر مسلم رشتے داروں کو اپنا دشمن سمجھتے تھے۔ جب قیدی پکڑے جارہے تھے تو حضرت مصعب بن عمیرؓ کے ایک بھائی ابوعزیز کو جو کفار کی طرف سے لڑ رہے تھے، ایک صحابیؓ نے پکڑا۔ حضرت مصعب بن عمیر ؓ نے کہا کہ اس کی مشکیں ذرا کس کر باندھنا، اس کے ماں باپ بہت مالدار ہیں اچھا فدیہ مل جائے گا۔ اس پر قیدی نے کہا کہ کچھ شرم کرو، میں تمھارا سگا بھائی ہوں، تم میری مدد کرنے کے بجائے میرے دشمن کو مجھے سختی سے باندھنے کا مشورہ دے رہے ہو! اس پر حضرت مصعبؓ نے کہا کہ میرے بھائی تم نہیں، اِس وقت میرا بھائی وہ ہے جو تمھیں باندھ رہا ہے۔ قیدیوں کے بارے میں مشاورت ہوئی۔ حضرت عمر فاروقؓ نے مشورہ دیا کہ ان قیدیوں کو قتل کردیا جائے اور ہر مسلمان اپنے قریبی رشتے داروں کو خود قتل کرے۔ حضرت ابوبکر صدیقؓ نے مشورہ دیا کہ تعلیم یافتہ قیدیوں سے دس دس اَن پڑھ مسلمانوں کو لکھنا پڑھنا سکھانے کا معاہدہ کیا جائے اور دیگر قیدیوں سے ایک ہزار سے لے کر چار ہزار درہم تک یا حسبِ استطاعت فدیہ لے کر چھوڑ دیا جائے۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے دوسری تجویز کو پسند فرمایا۔ آپؐ چاہتے تھے کہ قیدی صحابہ کرام ؓ کے ساتھ وقت گزاریں گے تو انہیں اسلام کے متعلق جاننے کا موقع ملے گا۔ اسلام کی حقانیت اور صحابہؓ کے حسنِ سلوک سے متاثر ہوکر ان قیدیوں میں سے اکثر نے اسلام قبول کرلیا۔
حق و باطل کے اس پہلے معرکے میں اسلام کی شاندار فتح نے مسلمانوں کو عرب کی ایک عظیم قوت بنادیا۔ عرب اور عرب سے باہر دور و نزدیک اس جنگ کے چرچے ہونے لگے۔ چھوٹے قبائل جو پہلے اسلام قبول کرنے سے ڈرتے اور کفارِ مکہ سے خوف زدہ تھے، انہوں نے کھل کر مسلمانوں کی حمایت شروع کردی، اور لوگ جوق درجوق اسلام میں داخل ہونے لگے۔ بدر سے پہلے اسلام ایک مذہب اور دین تھا، مگر بدر کے بعد وہ خود ریاست بن گیا۔
آج دنیا بھر میں جگہ جگہ مسلمان مظلوم و مقہور ہیں۔ کشمیر، فلسطین، اراکان، ہر جگہ مسلمانوں کو گاجر مولی کی طرح کاٹا اور ان کا ناحق خون بہایا جارہا ہے۔ کشمیر اور فلسطین میں ہندوئوں اور یہودیوں نے مسلمان علاقوں پر زبردستی قبضہ کرکے مسلمانوں کو یرغمال بنا رکھا ہے۔ اسلام دشمن طاقتیں مظلوم مسلمانوں کے بجائے جارحیت اور ظلم و جبر کرنے والوں کا ساتھ دے رہی ہیں۔ نبیِ مہربان صلی اللہ علیہ وسلم کے خاکے بنائے جاتے ہیں اور قرآنِ عظیم الشان کو نذرِ آتش کیا جاتا ہے۔ عالمی استعمار کھل کر اسلام دشمنوں کی سرپرستی کررہا ہے۔ ان حالات میں ضرورت ہے کہ عالمِ اسلام متحد ہوکر امت کے مسائل کے حل اور اپنے مقبوضہ علاقوں کی آزادی کے لیے مشترکہ لائحہ عمل تیار کرے، اور عالمی قوتوں سے مرعوب ہونے کے بجائے ناموسِ رسالت صلی اللہ علیہ وسلم اور اسلامی شعار کے تحفظ کا دوٹوک اور واضح اعلان کیا جائے۔ جب تک عالمِ اسلام اپنے مسائل خود حل نہیں کرتا، دنیا مسلمانوں پر مسلط کردہ ظلم و جبر کے نظام کو بدلنے کے لیے تیار نہیں ہوگی۔ غزوۂ بدر کا پیغام:
یوم بدر کا پیغام یہ ہے کہ میدانِ جنگ میں کامیابی کا انحصار مادی وسائل سے زیادہ نظریاتی اور اخلاقی حیثیت پر ہے۔ بدر میں یہ ثابت ہوگیا کہ امت جب ایمان اور یقین کے ساتھ آگے بڑھتی ہے تو اللہ کی نصرت اس کے ساتھ ہوتی ہے۔ جنگِ بدر رنگ و نسل کے بجائے خالص عقیدے کی بنیاد پر تھی۔ ایک طرف تکبر و غرور اور گھمنڈ تھا، اور دوسری طرف عاجزی و انکساری اور اللہ کی نصرت پر کامل یقین تھا۔ اسلام اور کفر کے درمیان اس جنگ میں مہاجرین اور انصار نے ایک دوسرے سے بڑھ کر قربانیاں دیں۔ آج بھی نسل، زبان اور علاقائی تعصب پر تقسیم ہونے کے بجائے عقیدے اور نظریے کی بنیاد پر امت کو متحد اور منظم ہونا ہوگا۔ امت کے اتحاد کی بنیاد آج بھی کلمہ توحید اور حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی محبت ہی ہے۔
فضائے بدر پیدا کر فرشتے تیری نصرت کو
اتر سکتے ہیں گردوں سے قطار اندر قطار اب بھی!

Share this: