زبان زد اشعار

Print Friendly, PDF & Email

دنیا میں ہوں دنیا کا طلب گار نہیں ہوں
بازار سے گزرا ہوں، خریدار نہیں ہوں
(مومن خان مومن)
……٭٭٭……
دنیا میں قتیلؔ اس سا منافق نہیں کوئی
جو ظلم تو سہتا ہے بغاوت نہیں کرتا
(قتیل شفائی)
……٭٭٭……
دکھائے پانچ عالم، اک پیام شوق نے مجھ کو
الجھنا، روٹھنا، لڑنا، بگڑنا، دُور ہوجانا
(نوح ناروی)
……٭٭٭……
دبا کے قبر میں سب چل دیے دعا نہ سلام
ذرا سی دیر میں کیا ہو گیا زمانے کو
(قمر جلالوی)

Share this: