زبان زد اشعار

اک معما ہے سمجھنے کا نہ سمجھانے کا
زندگی کا ہے کو ہے خواب ہے دیوانے کا
(شوکت علی خاں فانیؔ بدایونی)
……………
ڈھونڈنے والا ستاروں کی گزر گاہوں کا
اپنے افکار کی دنیا میں سفر کر نہ سکا
(علامہ اقبالؔ)
……………
ہشیار یار جامع یہ دشت ہے ٹھگوں کا
یاں ٹک نگاہ چُوکی اور مال دوستوں کا
(نظیرؔ اکبر آبادی)
……………
انیس دَم کا بھروسہ نہیں ٹھہر جائو
چراغ لے کر کہاں سامنے ہوا کے چلے
(میر انیس)